Saturday, December 29, 2012

تُو بھی مذہب بدست لگتا ہے


تُو بھی مذہب بدست لگتا ہے
تُو بھی فرقہ پرست لگتا ہے

تیرے اندر کوئی خُمار نہیں
تُو مُجھے جھُوٹا مست لگتا ہے
آئینے سے بھی ڈر رہا ہے تُو
حوصلہ تیرا پست لگتا ہے
اُف یہ موضوعِ گُفتگو تو بدل

زخم پر ذکرِ ھست لگتا ہے
زندگی کتنے سال لیتی ہے

فاصلہ ایک جست لگتا ہے
فیصلہ تجھ پہ میرے ہونے کا

کیا یہاں پر الست لگتا ہے ؟
شاعر:  رفیع رضا